27

ہے

واستان)

جمله حقوق بحق مصنف محفوظ سلسلہانشاعت نہ ر۹0

٠‏ عدیٹ شرب بول جو

مت حراشرف القادری

۲عد اقوور

حر لھرام یھ ای یل 2808م

3 ٦

٠‏ مم ٹن مکی تا ری

مل محداشرف القادرکی

ای سفت این تی کآاد

ککتبہ قادری عالبیہ تی کآباد

کہ تاور علیہ کآب ال پا ددذگرات جلاشیرن روز گتہ تادرہ ؛ جامع نلامی ر ضصویہ ان رولنلوہارت گیٹ لاہور لگ

بارکیٹ گھمر کہ خور ید ضوی گب رگ اے. فیھل اما ناکرا :

و

ناجنا اں نج ز: لیف

١ ٭‎

جن کے وج دا قد سس وا ہکوج تھی نے ء شر وشلورم انوار سے تھا ماش رب یکنافوں اور بپاکیوں سے ح٤‏ وبا فریت

لوگوں کے لیے وشمخفاءءوذریڈ کات :اور جخم سے نے کے لیے سیل عجات ٹھرایں

مس سے درا آورد ام تم مڑف گر تقول ان زے عوٹژن 2 شاہاں چھ عجب گر بنوازند گد ار طالپ غاء را کات جھیاےر مت

ئمیروا رو ومظرے

سوا (اورؤ

بر ۸وڑئ)

سا ۵

میا پناس تال فک

شمٌ الافاضٍلء بدا الاماژلء مرچع الفقہاء؛ يماءء زبدة الاتقیاءء دلیل“العاٍقین؛

زلیس یٹ الكدقِنء امام الہ چٍرین؛ یقدامالمحڈثین؛

کو

یت مفتی ا تم با ال صاح بقل قادرکی :نی ءاشرنی کے ام کرای سے 'مضرب* کر کے اپےد لک اناگ رایوں میں نون اور منرت

موس کرت اہوں رت 'ال نعا یر حمَڈوَميکڈا :

خدار مم تککرائیں عا شقایپاک طیضترا زم سا روم

7

٤ پا‎

۷

۹۷

٢:ریرتت‎

مقتمہ(احزال واتق) ینک ںےے. ۱١+۸‏ ئن صحلبہ نےبوگ ٹیلیا اس پردایو ںکاشدیدا ار کیا داقہحد یٹ پاک یس موجورے ؟

را ہی می

حد یٹ اول' ردایت امہ “از ط راید ہہلی دی رج

عدیثٹے دوم ”روایت اج این“ ازاھو شی عاکمء داز نی را ول ٹم

نعدلا چا مداڈ لم کے بل می کےامزاداے ڑل

بی

39 41

7

۸ جذاحاد یج تو پردہالی اعت راضاتکاج اب پ4 ۹ ہد أھادی ظا لی“ پردہالی جر کور ا ںکاجواب٭ ٠‏ آغاز تیر ہے امو ی,اورالی روش ۹ ”عاد یٹ برانی “جرد لی مفق صاح بک ۹ء ےجراب٭ ٣‏ دوک دقی+ وپ شی(حد یٹ گج امک نکر وا لد الک گیا حدی ٹک را یک ).۔ ٤‏ جم برای می الین عدنشیں ہیں: .١‏ عدیٹ نہ ۲.اینا ۳. عدیأمائکن ٣‏ الا تاد حد یٹ انل مج رای ے ۰. راولو کی وش ءلام وژالیی الھیشی ے ٘ ۷ تام رلویو کی فردافردا قشم حدیٹ وی بلے رے ۸ ایک ضیف من دکو لیگ رعد ی ٹک دنگ قوی سندو ںکو ھی ضی کر دکھان ہکا ںا اضاف ے ؟ ۹ اعادیف ذ فضاگی قدئی کے ساتھ ہجرانہ لاپروای وتتش کا سلوکگیوں؟

بش ۹م

ج”حد یی اتما حا ن “لی تحنحی تکاجواب بر خیلاجواب٭

1 قاعا عائ او رام دارقطن یکا ش ےج

ہج 47ھ

47 49

8 ٠‏ مام قسطلا کی پر صادکر ٠‏ ما کوک تج امام ما علی انقار بی نے بھی۱ کے ا . لئ عق شی نک جماع کروی طرف سے عدی شک توشق ا ات کابرار او الک والی میں رواہے دنر قوکی آسانیریں ٌ و اح نکی ایک خد جو اک گی سے کر ے پا ے : میگ دا قطنی کے ھوالے سے اک ش اذا . اک کی توکی اسانید کاہمارے سام نہ ہوناء کی عدیٹ یش تدع میں : : جوو راجواب٭ ۰ . مل یل حدیأمہ وعدی ام نک ؤال تاد رولت ہیں ہروا ت لو اک گی و للع ہے اجواب٭ے : فا ہس ضیف عحد یے بھی متبول وق ہے ب”حد ین ہتی “پر تحقید اوران کاجواب بے

. لی تقر

60

85ِ٠ک‎

65

65

یں

70

71 71

71 72

ریہ 8

73 73 73

۸ء لف ٠‏ .۱١‏ .٢‏ ۳. ٤ھ‏ .٥‏

۹ ۹

9 سو نی تقیرمزیر شرلەم . جاب اخ ٹوش کی مات 0 کے تھا قش" دن ہنی لی طرف بقل یفن ہی کے شیپ ول مار کک کہا عدیٹ حدی ہک یں قر ا رکیں کنل ان برا طریقت م۶ شیا بے او ال :رک ئک ری حدیث سے جم

7

ج حر مے ضَالی" و ”حدم اوراؤر' ”گر وہای تقیر

جواب٭

. الچ خیر

0), شائی دراو کے انتا ری‎ ٠ . مام مشی ط ے عدی کا گل‎ ۹

٠‏ ال :ری اخفائی لد دبد تین جن با شی ام اون عبدال اہی سے عدئی ےکی کیل . ٠‏ ام دی داماہ کی رف در جاک رتشن

ھی 88

74 75 75 76

27

ہس 80

81 82 82 وت 02" 83

86

کت 10

گی متدوں سے عدی کی گیل 0 ٦‏ دید ٤کو‏ رک وکیا آۓ اظر؟ کیا کے الا ۷ بت مدرم 'کاسش ہن اور ال سکاجوابے 94 ۸ ”حدی ٹا ھن لک ردامتب ہکم پ تقیر 94 ۹ وپ سس ۱ کام+ائھھ گا مت مس 94 ۱ ۷۴ تاب٭ ئه8 ۷۸ ایک :مد سے شف سے "ری" گار امائیر سے ۱ انقبار سے ضیف نی ہو جال سحیو اَل ٢١‏ ۷ اذیا عد یئن ولا اک :پر کے ۱ معلا زا رہ ا سک قجمات).. 96 ۷۳ ٭ ''روا یی کم“ پرمزید تقر٭ 937 ۷۶ ٭بجرآاپھ٭ھ 97 ٤‏ :تال کی حد یی وی می تریں میں ہو ٦ء‏ ب: بب ہاتٹتھ.., 98 ۷ جیا کان دروخ را ہے 98 ۸ د ذ ایک فزی زع 5 1++1+ .._. ۱

او گا ۸۱

۸۲

خجواب٭ دالیم نک د اما ططیال:......... خامتجاب ایرد یک یآ ؤبات حدیے کیبل الاک تاد ۰ سی بھی سفید بچھوٹ : : ٣دیچعال‏ رو : کتابیصےےمسسسسات مرقی 1 گی

اي ڑپ لْژ نٹرڈ٣‏

100 100

101 12 13 104 110

اق اہ یصو[ ۷. کتابكنتعات رق

اد

137 140 13 146 148 11 14 87 19 11 166 )

عم لہ رصن للرم

اگر یز استمار نے عالماسلام پر اپ خلہ کے بعد اپنےاقتار ے ا حکاماوردوام کے لئے مطلف تیر می اور بنھکنڑ ےآزرانے رو یئ النائیش سے اہم قرین ماش بی کہ ملمافو ںکو اپ مرک زیت ے دد دک دا جائے۔ یہ مرکو خی جناپ رسول اللہ مکی ذات مباؤکہ ہے۔اس متعد کے حصول کے لئ مستش رقین نے جن کے نام کن من مفالطہ آفریٹوں سے کام لیا؟ یھ ایک مد داستان ہے۔ ای تم. ململہ شی عہکامب سے ال اگ پلوی ےک الہ ںات صلہ میں ے ای افرا یش رگن جودانت اناد ات ان کل ہکارن گۓ_

لن صاان ا نلیف کو فلط فی یہک کہ دداپنےعل مقر دا ھپ فرارہے ہیں۔ نی الا رمالت سآ ب۷ا لاف ار ہی ھی علمتوں کے نان حسوس ہوٰنۓ زا ا ھالاکمہ مود اکرم لگ کےکمالات اللر ارک د تال کے جرفا نکی ج_

14 آ0 ای 75 کی بے ہیں ق دق ںکااود ا کا شا کی ہو رکاروںکا(اپ اپ وق اور نظ رکے مطائن) اورا وا ے۔ میکس ررضی ابل تول عم ہنی ال رج الھزت عاے/پن لا وب یپ کی صعبت سے شرف فرایاء لا حر یق کشازکاپیلہ انام ایاعر وداٹی کے کل ر٘س قد انموں نے ناپ رسالت پناہ بھی ھی یت کے میدود اہ را پانوں سے رک ےک یمکوشش خی ںکی۔ مل کرام نے اپ پیادے اود من مونۓ محبوب تل کے اپ مب ککو چان لییصار و کے لے ؛ ایت ا کآپلوں کے لے تر بای ھا بے شوقی اور سعادت ےآپ کے چان ہی ہکوحاص لکیاوراپنے مشاق جا ںکوختظ کیا ۔آپ کے ؟م : معظرومعیرسے مس ہوک ہآنے والے پان کے لے ایک دوسرے سے سیت حاحص لکرن ےک یک وش شک ۔آپ کے مو مبار ککو ‏ زہال با ان سے شطایاب ہو ے اور انی قوش ۂآخرت قرار دی ہوئے اپ تروں میں رک ےکی ھی تک ۔آپ کے فلت طاہرہکوفوي چا لیا ان کے طپیب و طاہراورنویف یف ہونےکا الا داقر رگ یکیال رک اصائ یکنٹرییکاشار نی ہوۓے۔

5 15 وت صوال يہ دا ہو تا ہ ےک آخراس جوائے س می اصا کنٹر یکا : اد ہون ےکا ضرورت بیکیاے ؟ اسیج نظراو رکم غم کے طعزہ لات سے خوف زدوکیوں ہواجاۓ ؟ شمد کے ذا کے ءا کی افاریت اور خفاشٹیو ل کا سے ادرک نیس ؟ کیاىہ ایک نے سےکیڑ ےکا فل ت٠رے؟‏ قددت نے ای کے لم می دہ کاردا ےکہ جب اس کے مرعلن اخمام س ےگگزد جات ہے انماخیت کے لے فیض مش و نیل ال ہو جا تاہے! رش مکی مطائمت اور ضشن سے متا ہونے والوں نے اور ا یا ماخ خی نکر نے دالوا نے بھی سوچاہ کہ رت نے ئل و٤‏ کا ذد بد ھا ایک نے سےکیڑ ےکو ہیا ہے۔ اذر یہ بچلدار دشت اور یت شی ور ا ککاذرلیہر نے والے پپودرے زین سے چ پک ایی رکرے ہیں اسے خوش ذائکقہ اور خوشبودار چھلو ں کی صورت میں نے ہو ال ےکردپے ہیں: سا سی کاغمر مالک سب نے ار دا طاہر فی نک یراز سے دامع ہہوے والے اور مر میا فغام آنے والے کا تکوشمد سے (یاد شفا شی : پھلوں ے زیاد

ول وی سے زباذہ سامالن فھمحت ونمراوت سچھے فذاس یں ج رت اکا ات ہے ؟ اس عقیقت کے انمار سے اس درچہ وروگ زان دی اگیاشرورتے ؟

78

زی نظ کاب جمارے زور کے مح اور معتجر عالم وین خرت ار تی مھ اشرف القادری صاحب کے تج علی ؛ تخت جرف گار یکا شاکار ہے کاب کے مقیمہاور تقریطات کے مطالعہ سے آپاں :یف کے یں منظر سے اور اس قمام واقعہ سے آشنا ہو گےء جس سے جوف یں تق مظرعام آلے۔

نع احبا بکوحد یٹ ش ریف أصولي حدیث؛ واور فی سا الال ہے زرا بھی واقی/ ے :وواس مخظکر شہ پار ےک قددو بتک گانرازہ ڈیا کت ہیں۔ حضری مل ر نے موضو غکو دی خوو ری سے بچھایاے اور موفوے تقق رکے دای تی ںکویش نواس طرح مھا با سےکہ معالا ار نر ہتی. مولائ نے صعیکرام سے شر ٤ل‏ کک یکا زا تکیاے:اورآھاد یٹ مہازک ہکی صحت کے دلائیل فراہم سے ہیں۔النا کے پل سے متعاق مو ہُسلوب می ںگنفنگو فرائی ہے۔اس یقت اہ رکا انا دکرنے والو ں کی با قابلِ رگا رک یمر شٹ کی ہے اور ا نک مفالطہآفر یو ںکوسب کے سان مو اکر دیاے ۔حضرتی قارنے شوت تحقین میس جن روایا ٹکو خلط مل طگر دی مفتی ضراخب نے انی دہ تلود وین فرادیڑے ءاورار ںکی تو شع ھکر دیی اہ ےکہ مح ینکر ام سا ا جات حد یی پا ککا ضرف ایک ککڑاکیوں مان فرراتے ہیں۔آئجہ میا دہ

7

قاماعاد یچ مہلرکہیھاکردیگئی, جن سے نفیں مل ہکی طول دضاحت ہد جاتی ہےاورع یرس ی وی لی ضرورتتاقی خی ہقا۔

لکتاب می حضرت علآم ہکا موضو ”حدیب کو لکا ات“ ہے۔طمارت یا عدم طدارت اس کا موضوع خمیں, لن تام اعادیث مبازکہ ک ےکا ہو جانے سے معتفِ موصو فکا نتل نظ راور اب کا کک وم فک خود و دوا من ہو جاج ہے۔ ا سکاب کے مطالحہ سے عامءاور طلہہکوببت سے اسے نار ثکات پا میش رآجایں گے :جو بہت جیکزمو نکی ور یگردائی کے بعد بھی پا تح خی ںآتے۔ رات الھرو فک رائۓ یہ کہ فی زانہ ٹس طر نکی خلدفسیاں بپھیلائی ای ہیںء اور جات وج ہوۓ ات یکو جس رح چھ پیا جار اہےء جارے ابا اور خطبا مک عوام الا سک وبھی مہ ذکات تمچھان ےک وشن کرک جایچے۔

اس مرعلہ پر خاکسا رکائی چاو پا ےک وا نظ ر کے سام اور عوام و خواص کے ساسمے ذرا ش روب سے ہہ سوالی ضرور اما ۓےک ہآتر ملا نکھلانے وانے ھ لوگو کو چناپ ر سو انل شس ےکمالا تاور نال کے دک سے اس در ابا مکیوں درا ہوگیاہے ؟ اس تالیف کے مطالعہ سے آپ داھیں م ےکہ ایک پٹ ھے کے ہو نے کا دعوٹیمرنے نے اور ایک مضمور و محروف اوارہ کے شعٍواقاء ری صدد من یکااعزاز

18 ٦ رن وال ےکس رجہ خیازت ھی سےکام نے رہے یں ؟ ا دو رکال‎ غن کا ےکہ مھ لوگوں نے خودساشعد عقیروں کے ت تزائش لے یں‎ توعد یے اقولی حاہاد تا لاف سے کتے تیاروشن اور ایلیا‎ تردیددلائیل مق آجامیں ؛ دو انیٹ پرکڑے در ہیں جے۔ہماپنےاروگرد‎ بہت سے تال ککو دک ر سے ہیں ء جن کا نشان اتاز عی مضوررسالات‎

مب مکی شان می ںکمتا فی اوردر یرود یئن پکاےے۔

ایے میں الیل متت سے علء من اوراصعاپ تر مرو تق رسکی یہ دارپوں یں بہت اضافہ ہو جاتاہے۔ تی کا دشرا لیف کانمانداین قاددری ہمئا غاد ہے۔ جنوں نےبیش اچ وکا لھرّ تل نکی ہمہ جو تکاوشوں اور خد ما گو قول قرا ے1 اکا آزل سے جم س بکوا نکی تخلی ری تنا رای ہر!

زاو ان

محر ضا ال بین م بی

۸ کی درارما رکیٹ لا ہور۔ ارامھ / ۷ ال نل

حفرت ش الیر یع ر مولام مفتقی مر عپگ اقم راد وگ ٰ ٹم الأرالزَحلی الیم

ا لی رما رلکزنی۔

حور علیہ القلوۃوالسلام کے بول ش بی ککو پیے کے مارے ایک سوال کے جواب میں مفقی اتی مولاج مفتی مجد اشرف القادری (دازال او جامعہ قادرٹ تی کہا رگجرات) نے ائصھولي فوٹی کے مطالن جواب داہاور وہ کے لات می لام جال الین میم ےا کے حوال ےکی رالی اوہ یکی صدبیٹ نل فرمئی۔

اس پ۰ جملم کے ایک خی مقلیر دی مواوی صاحب نے چنئي عد بی ٹکاؤک رکر کے مفتقی صاحب کے جوا بک تغلی کر تے ہو تے اق ہکا آفاریا۔

غیر مقر مولوی صاح بکو یہ فلط غیت یکہ ابلشقت کے علاء ا عدیٹ سے علاقہ نی رکھت ء اور صرف فقہ پر نظر رکتے ہیں۔ ایا ںا نے چن رکش کو وک رکر کے ای عدبیث دا یکا مظا ہر ەکیا۔ نج

ا رت تو پا ہوں رتس

ور یس سوا تتصیل کے بعد اللہ تی کے اص فضل وکرم سے حاصل ہو تاہے۔اس رہ سے ق رآآن باعد میٹ کا لیب ہو جاہے۔ اور جو قزم علو مک یتعیل سے بر دن یں فق ہک اور تل لڈی کش رک دبرعت تراردےاکے عدیٹ یکا خہدے۔

اس عقیق تک خداقتکاعیا کرش ےکہ غمر مقر مولدی صاحب نے توڈ دک کو یھااودپڑھاء مرا کے باوج دووزمیجٹ مل کے متا حدیٹ کے یم سے عارئی رہے اوران کی ہہ وا کی ٹل یکردی. لہ ملق یت نے فقہ میں غداداد لا حی گا یا پ مولوئی صاص بکیا فک کرد ہشیش سے بی ا مسعلہ الا تکر دید (ضتی) مر ع ٹر

جامعہ نظامی ر ضويے؛لاہور

ال

حخرت جال یرٹ علامہ موللا مجر عپڈرا یم شرف تادری

یلم اللاطی اَل تع رشع وع لی رمزیر الکرتی کی آیر

مت ایک عا یر یہ ہے ءا کےاجو دس بے سے مدادہریے بھی ایا نمی ںکر سکتاء یہ مج زلطیف جن لوگو کو عطاکیا جا ناہے دہ اپ موب کے موب ونائیس پر نظ میں رکھتے ءا ٹیس پیا جانے دالا عیب انیس وکھائی ھی ید بنا رر دو موب ایا ہو جس پرانسان امان لا پا بدہ ج-ے الیکا مات ما نے ہر عیب اور لس سے مز اس می کسی عیب کے دیفیاعلا کہ نے کاسوال بی ہرایس

گرم سرد دو عالم مل کے ایک مت صادق:علام شرف ور یں۔

الڈین بُوضیری غداڈ

کے ئےے ض2

۱: ما اڈَعَته التَسَازی فی

: رفکلزقاینت منخیئرزغی

:١‏ عیمائیوں نے اپ نی حفرت عیی علیہ الام کے مارے می جم تکی (کہدەخدا خیںء یاغدا کے بے ہیں) اسے چھو کر اکرم کی تتریف میں جو چا ھکھواور اع لو ۷ :کیک الہ توالی کے عیب کپ کے ففل و کال کی کڈ ابی عد نم ہے سے انال ذ بایان کا اللہ تا کی تدرتے کللہ کے سب سے علیم شاہکار: عبیپپ پردردگار مل کے فضائل وکمالات لود آپ کے ترا تک زی ادصاف بین کے جائمیں توائی مین ک نکر متا لوا ماشاالڈڈ کاوردکرنۓے کت ہیں, مین مخ صن موی چیہ بڑے :صلی مو قول کے رات بر جن اج دلیل اگ ہے +ویل بن کی جاے تح ماخ بی لک تق اتآلے۔ مخ کرات کے ایک ولدیٰ صاحب نے مازگاو رسالت خی گاۓ عمقیرت ٹ لکرتے ہے تق ری یں یا نک دیاکہ نا اکرم تل

23 کال رت یغاب بعس صحابہ نے پا ۰اس پچ ایک دی دک مولدکی ئے احتراق کیاہ ا لکیاحد یٹ سکو گی شوت اعد انموں نے جامعہ ہقادرے عالیہء گجرات کے مفتی اور فا ضٔل یل من را رلک مو می حراش فلت زأءٗهلّے زتفامکیا, مفتی صاحب نے امام اگ مل ام یی میگ ا تا یک ہتپ پاک ”'ختصائیص کی“ کے جوانے سے دلو حد یو سے اس ام رکا ٹموت ٹیل کیاکہ ددحامیہ خوا تن نے نی اکرم مک شاپ ملاک پاورددٹو ںکو ہمت سرپ رکت مل نے بھارت عطافبائی۔ سے پر جسلم کے ایک غیمر مقلد مولوبی صاحب نے خؿ آزائ یکرت ہو تقی ہک او رکماکہ او تقذاعاد یٹ یں اس ام کا کرو میس ہےء اور جن اعادریث مم یہ رکرو ہے دو ضحیف ہیں ءکیدککہ ان أھاد بی کی متد یس ۷و الگ یر ہیں اوردد ضیف ہں۔ حضرت امہ مولا جا مخت مھ اشرف القادرئی زی من نے اس تقید پر مق عاہانرازی گنگ دکی ہے اور حق کا تن اداکردیاے۔ انموں نے میا نکیاکہ ا ایی سلل میں تن عدشٹیں لا ہیں: جن ٹل سے ایک حد یٹک مفد ماک گی رلوٹی ہیں ماقی دوعدنشیں سے ضیف ہ وگئیس ؟ مام وی نے محر تین رض ایل توالیٰ عنا

24

کی حدی کو تر دا رگرا روم میک تاپ پیک رض یرکہ اننوں نے مض پاچ کے ایک ایک اعت راخ کامسکیت جواب دیا جھ ان کے مور نہ کی اعد یل ہے۔ یں مقل کے پٹ نے سے ای نت وجراع تکااندا یگگراور سا تھ بی وہک اور خی قلعم ءکار ان

کھ لکرسا سن ےآیاتاے۔ ال تالی مح رم زاضل مل مہ مولای میتی مد اشرف القادرق بث سے علم وفضل ویو تیدر سر اور فی و کت ایل عزید رکتیں عطا

فراے! آمن؛ مج عہرا کی شرف تادری نقشدری جامعہ نظامی ر ضويےءلا+ور

٣ارجب‏ قلماھ /۲۸ دج رنفڈاء

جے 67د

لو لالہ ال ال کیل یں

٤‏ کر سے ہد(

7 7- والسّلام وَرَحْمَة اللو

کر رکا لی تد زم التب لک یم وک الع خی رت

لقع ڑا ر١‏ زالب اھ کے پل خشرےکاواقد ‏ ےکہ ام مسچر اپ رت دجاعتء مو تع زنر وگال :زم لالہ موسی : ض کچ رات مو مفلصی ال تال مولدی بات جن صاحب ال جد ہک پا آۓ :اور اہ یش نے اپکی ریش تق رم رکرتے ہوئے یا نکیکہ :

شع عحابہنے پاب مبالاک ککی: خوش

کریاود“

بن اللر١‏ اس فضیلت نب یکو گ یکر ای یت کے ایمان تازہ الد دل با برغ ہو گے۔ گر ماؤوں: کے دینری جخرات حضو ارم ٹپ کی لیس ففیل تکوبرداشت نہکرہاے۔ خصومان کے مولوی تصصاحب فواس ف بی ہر ےکہ جوش میں آ کر جک راہ :

26 بی سعالی نے حضو رکا پاب پیا ہدہ ابا تکا

حد یپاک م لکوکی وت میں ۔اگ رکیل ہو فور 7

مولدی ہار ضحین صاحب نے می بلایاککہ دورد گی بہت شور پچارہے ہی ںکہ ا کوئی عدیٹ شی ہے ء یہ عق مولدیدں ا گرا ہوا ڈو سلاہے۔ ازس وجہ سےگاؤوں کے لوگوں یس بے یی پاگی جای ہے۔

لس گنو چاری رکتے ہو مولوی ار ین صاحب نے اتقرسےکراکہ ابی کی نظ رآپ پ تھیء لپ کے پا حاضر ہو گے ہیں۔ ازراِکرم لس من کا حوالہ خر فرمادیچئے! اور سا تھ بی ایک ت می اتنام بھی بی یمکرزیاہ جن س کا پور ا مضمون پیٹی نظ رکتاب کےآغاز می مرن ے۔

ریمیں‌ے ا مولوئی اشرف لی تھانوی صاحب نے الال می ”رولت سے سرت خی کے موضوغ پ ایک تنا باکھی تھی ۔ نانوی صاحب ا لکناب کے خ نل بی ؛ عد یچ پک کے ڈدداھ نف لکرتے ہیں

27 کت ر شی ال لی ختما اور

آ پک ادج نر شال تال متمان ےآ پ کاو لی اقم نکیا موم ہوابساشیری خی لہ ے0 تفم کے جواب یں ہن وگ تھاوئی صاح بک اکا بکابہ ایک 1 کرد ات مین امہ کر نے کے لی للع قالیاقای کان ا ودای وج لین سے معلوم ھا اللہ تال کور ںگمنگار پان سے ایس اک حد یکا شقن سے مسلط مس ایک خر مت لینا اللہ تال اس :انال پرییے بدا فل ہے ذيك تَشُْ

تب انی

ایں معادت+ورہازویستی

جا نہ نکر خر ا ۓ بنین و ٠‏ اک ہہک راک ام اریہ یش یریپ پڈی کنا پک وت ٣ر‏ ن٣‏ 7 اب الم تر شین کے جوانے سے ولر ود یں موجود تھی جن

ِ الطیب فی ذکر النبی الحبیب“ : اشرف علی تھانوی ”'فصل' شسائل, قریبا آخر وصل چہارم' (ص: ۱۹۶), طبع تاج کاپنی

28

می ڈو صحابی نی قذنوں رض اللہ تال خنما کے مکل مبالوک ٹیک پٹ کا واشح تکرہ موجودق۔ بج و نے اتفتام کے جواب میس بی واونویں عز یں مع تج دتفعیلل حوالہ تق لکردریںءاورجواب مولوتی اق جن صاحب کے سپردکردیا۔ مولوی صاحب بی جواب ےک گول بن گئے۔ چمارا نوں نے جات بی می د یم کی موجودگی جس ددعدئی مولدل صاج بکو ہہ جواب دکھاپا۔ انمول ئے بغور دوثول: عدی کو پڑھا اور ما موش ہدعے دم تل کہ ایک شائدارء اور اٹ دی کے فز یک صأہ فخیاپ کی کے خلاف مرج کا شوروخوغا حم وواءاورایک با تقد فردہوگیا۔داوبجد یو ںکو حخت فلت اٹھا پڑیا-

مولوئی اق ضیان صاحب نے پتالاکہ اس جواپ کے رہ اود ند یراع فلظ کی حد یٹول پ تقیدکی خر سے دلو فا مولدی صاحب نےگجرات اؤد اح میس اہے عھی مرک زی طرف غخوب دوڑپھا لک کی سے مطل بکاجواب نہ ماد دویچارے ھک پ رکرٹھ میں

سی ام یں .بی کے ایک صاحب جو اعد ی ٹکھلاتے چء دید دی مولوی صباحب کے پا یآ مگ کن مگ ےک ہآپ کے فرتے کے علمام نے اس جوا بکارما خی سکیا وق بات شیں۔ ملح یٹول کے عماء

۔

29 --

ا کی دید یں گے۔ چتانچ مد ہکا تمس می درب الاددعدٹیں

١‏ ھی ہوک تی ؛ نےکر یہ صاحب خر قرع دای کے ال قا افۃ رکز جامعہ اڈ “لم کے ملق صاحب کے پال پچ :اور قیت پ”جواب کے لب گار ہدے۔ فی ملین ای عدیٹ اور حدیٹ پاپ اجارددارک کھت ہیا۔ ای رع می ان کے مطتی صاحب اباالوا بککھاء ار دونوں حدیول پے خواہ مفواوزر وس تقی کر اورپ کک عدیٹ کے حوالوں کٹ پر سے الن عد یں کا

دک یم شک رک دیاہ نول گند

ج چا ےآ پ کا شگ کرش مازکرے

مو لوک اھ کین صاح بکاکمناہ کہ جو تی وہای مفقی صاح بکا اواب یا تقیری فی جاؤوں پا شگرین ببوے وش ہوے و نے رس رانا ورس تقیی فی کے جوا ب ابس زجاعت در مال شرو کروی

ِ موسر و ا ان

30

آیاےء مرن نے بداو عم ہیا رکھاہے۔ لب ا کا مضبوطو مجسوطجواب

درککارے اورسا اھ ہیاس کااستغتاء جن کردا اس ضور تال یہ فورفرمایے! نکیا ایک ری موظرےکا | شل ئن بھی تی۔ ناخ بد ونے الف کا نام بےکرا تخس جوا بک جس میں ”سواہ کے بولی مالک تک یکو ین لک آعاد یٹپ لفلہ الا زوا ُسولو ںکی روش میں, مر حاصل ح ث کر کے ء ان کے مقار کی ایک ایک تقید اور ایک ایک اختراض کے تخرد و کیٹ جواب دے کر ہن ماد ی کی عقت وی ہکا بے غبلہ ہو ادا کیا اود جلم کے لود ی کھلانے وا ےمط ان ن کیج مر ےپ تق بک کے :انا کے ذفائی تہ سے سا تھ تب یپ یہ مفالطہآف تی :غل وٹ :اور کیذب میانی و خی رہا سے پردہ اٹھادیا۔ چنانچہ ملاحظہ فررانے سے نظ رین

2 ال خودپت جل جاۓگا۔

فوئی ا مضمون کیل ترسے کے بعد موی باقر نین صاحب کے سر دکزداگمیا۔ شی کے بعد النا سک ےگگائوں ٹس سے درم تال ا فعنم کا غاقہ ہوگیا۔ مولوبی صاحب مال نے ان کی مد فو ٹا پا کرای ,اور ضرورت من دحا بکی نز رکیل ۔ ای کک گان رکوژ ال اپلعر یٹ صاح بکو بھی دگیء کہ دہ اسے اپنے چامعہ ا

31 8

۹ جلم کے فی مل ملق اح بکاخدعت یس پٹ کزین کزان کے پا کو جواب ہو قاسے مفیقرطال پہ لائیں۔ خداشا ہر ےکآ عاتم رک سے زیادہ رم گور لاہ ےگ رد کلانے ائے مق صاحب لم نے اپھ یک ککوئیجواب دیاء کاڈ تالآ بی گا رے۔

۱ بیو راک نیز ےک مارہے ہک ہم سے نے میں خارے

تھے چار:جھ یکا دار ہے ؛کہ بی داردارے پارے

ای فقو کی فو ٹا وا کاپ ےکپ ہوتے ہدئے دو ورازکک امہ فظامیہ ز ضوبہ لاہور کے نام اع رت ملا رہ می مر اہر ای اد یٹ اہ عفرت مر مر کم . ک قادرئیئ خی نے یں تق رای ککھیں.:دونے ال پر ظرعل کے جاہچارا ہنا عنوان ما مٌ مت

رر سی کی رح :خر مطبوح ”اوک گی پا یا فو ٹکو ںکیا شل یس احباب کے پا گر د کر

ھا 32

آن کار براور ع زی انقزر صاجززادہ مجر مسحود تار ىبَارَك ال ای ین ارم تع گر مرا ارتا ”لباقت نی ککادہگجراتنے ال کی بات وطاعت اور اشاعت کا دشوا رگزارکام اپ ذقہ لیا۔

4و2

ان ویو رت لیے ھا ےک اکلہ تا موشنو فکواس سی گیل پ گرا رت ے اور چملہ ای انگ رف سے جزاۓ خر عطا

۰ اور بی ہیی رف سے منرت فک ان سکاجواب ٭“ثػ پھر: النریٹ مفتی صاح بک طرف سے فوکی یں مندرجہ ات وامتراضات .7۰0۰: ان تقیرات داع تراضات پ جوا بک خر سے تام ۳ روک رق ےل

جراپ

فو کے زان ض رز قالا رام می نکی تفزیجات سے ”شر تو بلک مکی کی عید وس س بکو لیعر ہیک

رھ ش رکال مکی کے لے , واور مگر کن کم

34

ؤفزق ےےےے مم ۱:3 یشیم الله لرَحمن ارجم

حعثڈ ارس جفرت شا والیر یٹ خاھی سا سلامءاستاز العلراء: علامہ مفقی مج انشرف القادرئی صاحب دامت رکا العالی !

پور ازسلام صنواع!

قبلہ ہوارے یما ںآ کل ایک مل رخف تی لی ہے ۔بات ىہ س ےکہ جس نے ای مد وع کرت ہد ئےمیال نکیاکہ :

' یس ھا کرام رخالظہ تالائم نے

حور پک صلی ال لعل الہ سکم پاب شریف

پوقد“

ای پرگاؤںا کے دیدید کی مولوئی صاحب نے بڑے زور سے جن کالے:

مالس با تکائی عد یٹ می وت نہیں ہے ؛اگر کی ہو تو رکھاا 7

تضورروا کی خرمت می موق گار شی ہ کہ درب ہلا داق کا

35 وت حد یپاک کے جالے سے ت رم فر اک رل یکو شف کیں؛ بہت مریا مگ نقاداللام

7 وشن امام مفیدااشیقت, نینرودای نز لالہ موی ء ضل گج رات

اَلْمَوَاثُ اھ ےغوٹ العلام نک لوتب

اما نیع مو

ا رس ال تحت و لی لیر الپ

گج لا حظ یا پ امام یکل ءحافطہ ہ جلا الین عرال جن بن ائ رای فرراتے

خرح الطبرابیء الین سَتَلو صَحِیٔم کک شس انح اد مج الال کب

صلی الد تال مرا رَمَت ا ین حَیه تل ونس ۂ تخت رہہ کم

من کے ٦‏ 1 التدخ؟ کلوا

کطلبۃ فلم بجنہء تال عَتَّهٌ

ِتث مَعھا بن ای

2

بد أی سے حر کیا ہف نے اہک دالد و حضرت أئ ےر شی ال تال ختمانۓ دای تکیاءفربائی ہی ںکہ : ٹچ ارم مال تالا علی کی دم کے یہ ںککڑی کا ایک پالہتاء جس یش تضنور یجاب فریاتے اورڑے اپ ار ال کے ین رک دیے۔ فو ایک با رآپ اٹ اور اس پیا ےکو طلب فر مایق اسے وبا نپا یاء قذ ای کے باارے ین دریافت فربایا۔ فربایادہ پل ہکماں ہے ؟ لگھم والوں ۓ) عرض کیاکہ اس ےاج ہر شی ال تال مکی نادمہ ”ئک رض اللہ تعای عنمانے ؛ جو ان کے سا تھ مر زین عبشہ ےئ ہوگی تھیںء پالیاے۔ ت

37 ٹچپاکرم مل ال تال علیہ وہ وسکم نے فربااکہ یقینائ نے الیک مضبوط سار کے سا تد اپ ےآ پکودوز نے کویکریاے۔“ ٢۔‏ یمام شید ی ید فرمات میں : ٣تح‏ لعل وَالْحَائء زَالکار تین

الا وک حر بین رغیی اللہ تکاللی

مشناء قالٹ:

کا لیخ تی الک ای کم رکم یں ال رل مار ؤال پیھا۔ قشم وی اللل وآ عَلَت انا لٹا قنع خرن 20 ا ار و ا

آیاے؟ (۸)

فی عکم داز لن ؛ گرالیادراہ ش شال تال خماے ت کیا ڈوف اق “الخصائصٰ الکبری" : السیوطی“ذکر الخصائص التی اختص بھا عن ہ إغء قشم بَا باب اعتصاعَغہ صلی الله صالیٰ عله لہ وسلم بطہارۃ دمہ وبولھ وغائطہ' (۲۵۶/1) طبع مطبعۃ دائرة المعارف عیار آیا ڈکن

38

و 1

ااکرم ساقال مل کرت . |١‏ ری سے ایک شھیکر ےکی طر فتٹ ریف دائۓ پر یئ پیشاب کیا۔ ای رات کے دورا نکی ںی اور یجھے پیا گی ہوی ,تق ج ہہ اس میس قایس نے لیا۔ جب لچ ہوئی فو یں نے حضو رکوہ واقعہ تایا تر حور أ سے :اور فریا: موا تممارۓ پیش تھی و ای وی

از کے الفاظ یہ ہیں : کہ ت مر کے بعد کب بھی اپنے پر لیف مسوس رہگ"

اللہ تعالی سوا اک صلی الل تع مکی زلم

((ٰض ) س رز ((ذاورغ دارالافتاء الجامعة القادریّۃ العالمیّۃ

خاقالوئی بآباد کی پا روڈ ءگجرات ٭ ذوالقعدۃالحرام ١۱٢۱ھ‏

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

نحمدہ ونصلی علیٰ رسولم الکریم۔ اما بعٰد!

ٌ طرائی بش ہی ردایت موجودہے جس لآپ کے پیا بکرنے ورام این کے می سے پی سے کاذکر ہے لیکن ا سکی مد یس ”لبیک

'راوی ضیف ے۔ کیلرا.مف ۹د بر:۲)

کک یش یہ ردایت تر موجود ہے نین اس یش ام اشن کے یغاب کے پییے کا ذکر موجود نئیں۔ اس میس صرف ات الفاط موجور

”عن حکیمة بنت امیمة بنت رقیقة عن امھا قالت کان للنبی صلی الله عليه وسلم قدح من عیدانِ تحت سریرہ یبول فیه بالیل“

نکی بی کاب ظا جلداول مف ۰۹) نسائی شریف میں بھی ىہ ہی الفاط موجود ہیں اور اس میں ھی نکااک نہیں اض الطر اید طی لدول مف ٠‏ ا دود می بھی یی الفاظہ ہیں اور اس یس بھی پاب کے پٹ کا

40

تک حا می بی روایت موجود پاب کے پیٹ ےکالک ھا موجود ہے لین اس مند میں وو ہی وش اور ضعیف رلوی ا پلک شی

موہورے۔ (متد رک ہکم ۔جل ا٣ص )٠۳‏ امام ھاکم اس روای تکوال کاب می ایک دوس رب تہ بھی لاۓے ہیں لیکن واں یغاب کے پپینے کے الفاظ موجود ٹیش بلعہ صرف را تکو آپ کے پا بکرن ےکا کر موجود ہے۔ایام ھاکم اور امام بی نے ال روای یکو کے ترریے۔ (متد رک اکم جلاول صفے ۹۹) ابزا گی صورت جوسائ ےآئی دد یہ ہےکہ سج رولیات ٹ شآپ سے رات کے وت پیا بکرنے کک کے نین اے ہے کالکر کی نی ا کی تام تر ذمہ دارکیل مالک شیپ عائد ہی ہے ج کہ ایک ضیف انمان ہژں_ مُذاما عندی واللّه اعلم بالصؤاب

م تقوب قریٹی جامعة العلوم الاثریه

۶ ے-٦1‏ ےا

لم پ یکا مد پچا گ کرٹ

رآ دع کے یورام ہبہ ہو بنا

کے چو زگ نر ہے سے کر تی ز کم یب عددیت دودو در مویہ بپ الاک پیک کید کید ہی ہن ہے

نو ا فی کے سس سے سر ہر رہ م۴ رس ددم ہک سر کات دک زگام مب وت ج ےکن * اہ ساب سن کو دنل و مدبودنوہ سی مرف سیب رر

4

کر

ماب کے دامکام موم رہل ہس ند

زر مکی ہد سدقم دمد یہہ کے 4 ریو

درد وم دییکحف فلس پرنائر:

42

و خر جح اشرف القادرئی صاحب ؛داصتب رکا مم العالی ٍ

بعد از سلام وآراپ!

جناب نے اپنے فنڑے میں اع صعلبہ کے "وی ماک کی الکو پا ےکا وت عد یٹ اک سے تر فرای ھا پہجھلم سے 'پامدر اثرت “کے الو یٹ مطتقی مج تقوب ترریٹی نے سرت تقیدکرتے ہو سے ٹر کیا کہ جن حد یو پیخاب پٹ کا رکرو :دوب "لو مالک تی ' ضیف راو ابی نکردہ یں مال تام عدیٹیں ضیں یا۔

اب سوال بی ہ کہ الن اکا اغترائ کھالی تک درست ہے ؟ یا تقیقی ما لکیاے ؟

تق ہیں ان یمام باتں کا اتیل ے جواب درکارے ۲

پا جو وت نزو ای آپ

43 کا دومہ کے ائسقت پمڈااصان ہوگا۔ اود یٹ ملق یک تقیرئی فو اضر ضر ہعے۔ تسراظام: پازمر : مولوی باقر سجن امام داب نت ددجماعت نر ووال ء نز لالہ موس :گج رات

اَی ربکت اعد انز لوتب

یش اللر بش رت وع می رمنرلر شیب | لکن وکا حول فا رع مین 202

ضس تعحابہ رض ال تا ممم ں کے پاپ اوک ٹیک پٹ کے واقعد سے متا لام عافط جال ان الک کیب | "یش یی“ سے ہم نے وو عدشٹیں بر یپ زی نف کی

44 با نکیااورا کی دو گج قراردیا۔ دوسری عدی ٹکآپ نے اون عاکم+دار قطنی :اور و یر رحالہتالی یم اون سے نق لیکیااورا ںکی ند کے بارے می ںوت فریاں ری ”جامعہ ات “جملم کے وازرا فا کی طرف سے ان پر جو منقیدکی گئی, سو یآتیدہ میں اس تتقید کے جواب کے سللے بس چنرگزارشات || سرت مکی جات ہیں۔ جن کاعطاح ہکرنے سے انطاۂ الف تھا بر ردنداو |. م ماوکی طر وا ہو جا ےگاکہ ىہ تقیرات داختزاضات سراسر خائب واتعہ ہیں : جوکہ تار اعد یٹ مفقی صاح بک نل ججمالت ہیا خاتء دای شان رسالت پہ من ہیں۔ اللة ولا ش٠‏ تدم اك

پور وھ ص۶27

الحْقبْقي۔ یم اصول وع ۷ :

(ا) ”الغصائض الکبری“: السیوطی'ذک الخصائصِٰ الٹی اختص بھا عن آمته الغ. قسم الکزامات: باب اختصاصه صلی الله تعالیٰ عليه وآله وسلم بطنہارۃ دمه وبوله وغائطه'' (۲۵۲/۲)ء طبع مطبعۃ دائرۃ المعارفء شید رآراد دا

(۲) ای

ے

45

ھا یک نے پرد ہی اختزاضات ز ایل

جاشا ای ےکہ اما می ی ن ےط رائی کے جوانے سے وا حد یٹول کویا نکیاقا :اود بک یکو ساد بی قرارد یہ جاک ہلپ تفمیل جیا جاپکا ے۔ نایم صاح بک چا تھاکہ ت جیب وا کو مارک بن کرد را کی بی عدریٹ گل وک کے اس کے رو قبول کے بارے نٹ اپ را ےکاندا رت ؛ تچ راس کے بح دٹروۓ تخن دوس ری عدی ٹک طرف کرتے گر جتای ھکل روش ماد فراپے١‏ کہ راک کا را اد مدیٹگڈہرے تقیری مض می کی ا کک را ا شلیاءاور میں تلم پلڑتے ہ ران یی دوس کی حدیٹ ''حد یا ا تال متماب رش رو کردگ۔

آمار انی یرد ای طخ سا بکا قح چنا آنازیٹں موصو یر تطرازیں

مسعمایلالر خی ن ا رجیم

شید وو صلی علی ر سو اکر ).بجر طرائی مں ہی ردایت موجود ہے جس یں تپ کے پیا بکرنےاورام ان کے لی سے پیل کک ہے ۔ ]نا